poetry urdu

Muntazir Kab Ee Tahayyur Hai Tiri Taqrir Ka

Mantazir Kaab Sey Tahayyur Hai Tirri Taqrir Kaa
Bat Kaar Tujjh Par Gumaan Hone Laga Tasvir Kaa

Raat Kyaa Soie kha Baaqai Ummar Kia Neend Ud Gayi
Khwaab Kya Dekhaa Kha Dhadkan Laag Gaya Taabeer Kaa

Kaise Payaa Thaa Tujjhe Phir Kis Tarah Khooya Tujjhe
Mujh Say Munkir Bhi To Qaael Ho Gaya Taqdir Kaa

Jiss Tarah Baddal Kaa Saaya Pyaas Bhadkata Rahe
Mein Ne Ye Aalam Bhi Dekha Hai Tiri Tasvir Ka

Jaane Kis Aalam Mein Tu Bichhra Ka Hai Tere Baghair
Aaj Tak Har Naqqsh Fariyadi Miri Tahrir Kaa

Ishq Mein Sar Phodna Bhi Kya Ki Ye Hai Mehr Log
Jue-khon Ko Naam De Dete Hain jue-Shir Kaa

Jiss Ko Bhi Chaha Use Shiddat Se Chaha Hai ‘Faraz’
Silsiala Tuuta Nahinn Hai Dard Ki Zanjir Kaa

منظر کب سے تحیر ہے تری تقریر کا
بات کر تجھ پر گماں ہونے لگا تصویر کا

رات کیا سوئے کہ باقی عمر کی نیند اڑ گئی
خواب جیا دیکھا کہ دھڑکا لگ گیا تعبیر کا

کیسے پایا تھا پھر کس طرح کھویا تجھے
مجھ سا منکر بھی تو قائل ہو گیا تقدیر کا

جس طرح بادل کا سایہ پیاس بھڑکاتا ہے
میں نے یہ عالم بھی دیکھا ہے تری تصویر کا

جانے کس عالم میں تو بچھڑا کہ ہے تیرے بغیر
آج تک ہر نقش فریادی مری تضریر کا

عشق میں سرپھوڑنا بھی کیا کہ یہ بے مہر لوگ
جوئے خوں کو نام دیتے ہیں جوئے شیر کا

جس کو بھی چاہا اسے شدت سے چاہا فرازؔ
سلسلہ ٹوٹا نہیں ہے درد کی زنجیر کا

Related posts

Leave a Comment

* By using this form you agree with the storage and handling of your data by this website.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More